کلاڈیا ویب کا دنیا سے پاکستان کے قرضے معاف کرنے کا مطالبہ

Spread the love

برطانوی رکن پارلیمنٹ کلاڈیا ویب نے حالیہ بارش اور سیلاب کی تباہ کاریوں کے باعث دنیا سے پاکستان کے قرضے معاف کرنے کا مطالبہ کر دیا ہے ۔ کلاڈیا ویب نے کہا کہ پاکستان میں مہنگائی بہت بڑھ گئی ہے ۔ دنیا پاکستان کے قرضے معاف کرے۔

کلاڈیا ویب نے سوشل میڈیا پر جاری بیان میں کہا کہ پاکستان گرین ہاؤس عالمی اخراج کے صرف ایک فیصدحصے کا ذمہ دارہے مگر ماحولیاتی تبدیلیوں میں پاکستان سرفہرست 10 ممالک میں شامل ہے۔ہماری لالچ کی قیمت چکانے پر مجبور ہے۔

دو روز قبل اپنی ٹویٹ میں اس اہم مسئلے کو اُٹھاتے ہوئے کلاڈیا ویب نے ٹوئٹ کیا تھا کہ گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج میں عالمی سطح پر پاکستان کا حصہ ایک فیصد سے بھی کم ہے لیکن پاکستان موسمیاتی تبدیلی سے متاثر ہونے والے سرفہرست 10 ممالک میں شامل ہے ۔ دراصل  پاکستان بڑے ممالک کی لالچ کی قیمت چکا رہا ہے۔کلاڈیا ویب نے کہا کہ پاکستان کے پاس قطب شمالی کے بعد سب سے زیادہ گلیشیئرز ہیں جن کی تعداد 7 ہزار 253 ہیں اور یہ سب تیزی سے پگھل رہے ہیں۔

برطانوی رکن پارلیمنٹ کی اس تجویز پر ہزاروں ٹوئٹر صارفین نے لائیک اور ری ٹوئٹ کیا ہے۔ اب طاقتور ملکوں کی ذمہ داری بنتی ہے وہ اس توجہ  دے اور پاکستان کے ذمہ قرضوں کو واپس لینے کی بجائے انہیں معاف کرے۔

واضح رہے کہ پاکستان کے بیرونی قرضے معاف کرنے کا مطالبہ کرنے والی خاتون کلاڈیا ویب برطانوی پارلمینٹ کی آزاد رکن ہیں۔ 2019 میں لیبر پارٹی کے ٹکٹ پر لیسٹر ایسٹ سے رکن اسمبلی بنیں۔ وہ پہلی خاتون ہیں جو کہ اس علاقے سے منتخب ہوکر پارلیمنٹ تک پہنچیں۔ ۔  ان کے والدین افریقی نسل سے تعلق رکھتے ہیں، اور کیریبین کے ایک جزیرے سے برطانیہ ہجرت کر کے آباد ہوئے۔ کلاڈیا8 مارچ 1965 کو برطانیہ کے شہر لیسسٹر میں پیدا ہوئیں، اور یہیں پرورش پائی ہے۔