سیلاب کی تباہ کاریاں،مزید119ہلاکتیں ر پورٹ

Spread the love

ملک بھر میں سیلاب کی تباہ کاریاں جاری ہیں۔مکانات ، سٹرکیں ،پل تنکوں کی طرح بہہ گئے ، این ڈی ایم اے نے نقصانات کی تفصیلات جاری کر دیں۔

نیشینل ڈیزاسٹرمنیجمنٹ اتھارٹی کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹے کے دوران 119 افراد جاں بحق ہوئے جن میں32 بچے بھی شامل ہیں۔ سندھ میں 76، خیبر پختونخواہ میں 31 ۔بلو چستان میں 4، ،پنجاب میں  ایک اور گلگت بلتستان میں 6 افراد جاں بحق ہوئے۔گزشتہ روز سیلاب سے 71افراد بھی  زخمی ہوئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق 14جون سے اب تک سیلاب سے کل ایک33افراد جاں بحق ہوچکے ہیں۔سب سے زیادہ سندھ میں 347،پنجاب میں 168،خیبرپختونخوا میں 226 جبکہ بلوچستان میں 238 افراد جاں بحق ہوئے۔اس کے علاوہ آزاد جموں و کشمیر میں 38 ،گلگت بلتستان میں 15 اور اسلام آباد میں ایک شخص جان سے گیا۔

این ڈی ایم اے کا کہنا ہے کہ سیلاب سے 1527 افراد  شدید زخمی جبکہ 9 لاکھ 49 ہزار سے زائد مکانات کو نقصان پہنچا۔۔ حالیہ سیلاب سے اب تک 8 لاکھ سے زائد مویشی ہلاک ہو چکے جبکہ 57لاکھ 77 ہزار سے زائد افراد متاثر ہوئے۔۔51 ہزار سے زائد افراد کو محفوظ مقامات جبکہ 5 لاکھ لوگوں کو امدادی کیمپوں میں منتقل کیا گیا ہے۔3ہزار 451کلو میٹر سڑکوں اور 149 پلوں کو شدید نقصان پہنچا ہے۔

دوسری جانب پاک بحریہ کا سندھ کے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں ریلیف اینڈ ریسکیو آپریشن جاری ہے۔ترجمان پاک بحریہ کےمطابق پاک بحریہ کے ہیلی کاپٹر اور کشتیوں کی مدد سے قمبر،بکرانی،لاڑکانہ ،سانگھڑ اور سکھر کے نواحی علاقوں میں محصور افراد کو محفوظ مقامات تک پہنچایا گیا۔ ترجمان پاک بحریہ کےمطابق متاثرہ علاقوں میں پاک بحریہ کے ہیلی کاپٹرزکے ذریعے راشن بھی تقسیم کیا گیا۔

ترجمان پاک بحریہ نے بتایا کہ سیلاب سےمتاثرہ علاقوں میں طبی سہولیات کی مسلسل فراہمی بھی یقینی بنائی جا رہی ہے ۔ پاک بحریہ مصیبت کے شکار ہم وطنوں کی بحالی تک امدادی آپریشن جاری رکھنے کے لیے پر عزم ہے۔