کیپٹن راجہ محمد سرور شہید نشان حیدر کا 74 واں یوم شہادت

Spread the love

پہلے نشان حیدر کا اعزاز حاصل کرنیوالے کیپٹن راجہ محمد سرورکا یوم شہادت آج منایا جا رہا ہے۔ گوجرخان میں کیپٹن راجہ محمد سرور شہید کے 74 ویں یوم شہادت پر تقریب ہوئی ۔ جس میں ڈی جی ایس اینڈ سی ٹی میجر جنرل ممتاز حسین بطور مہمان خصوصی شریک ہوئے ۔ سول و عسکری حکام کے علاوہ شہدا کے لواحقین نے بھی تقریب میں شرکت کی۔ پاک فوج کے چاق و چوبند دستے نے  گارڈ آف آنر پیش کیا ۔

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی طرف سے میجر جنرل ممتاز حسین نے کیپٹن محمد سرور شہید کی یاد گار پر پھول چڑھائے ۔ کیپٹن محمد سرورشہید نے مادر وطن کے دفاع میں کمال بہادری اور جرآت کا مظاہرہ کیا ۔ کیپٹن سرور نے جان کا نذرانہ دے کروطن کے دفاع کو یقینی بنایا۔

کیپٹن راجہ محمد سرور کا یوم پیدائش

کیپٹن راجہ محمد سرور راولپنڈی کے گاؤں سنگھوری میں 10 نومبر 1910 کو پیدا ہوئے۔کیپٹن محمد سرور کا تعلق ایک فوجی گھرانے سے تھا۔ کیپٹن محمد سرور کے والد محمد حیات خان بھی فوج میں تھے۔کیپٹن محمد سرور شہید نے اپنی ابتدائی تعلیم فیصل آباد کے گورنمنٹ مسلم ہائی اسکول طارق آبادسے حاصل کی ۔ پھر 1925 ء میں تاندلیہ نوالہ مڈل سکول سے مڈل پاس کیااور 1927 ء میں دسویں جماعت میں اوّل پوزیشن حاصل کی۔

پنجاب رجمنٹ میں کمیشن اور کیپٹن کے عہدے پر ترقی

اس وقت آپ کی عمر 17 برس تھی ۔ 1944ء میں پنجاب رجمنٹ میں کمیشن حاصل کیا ۔ جس کے بعد دوسری عالمی جنگِ عظیم میں حصہ لیااور شاندار فوجی خدمات کے پیشِ نظر 1946ء میں انہیں مستقل طور پر کیپٹن کے عہدے پر ترقی دے دی گئی۔ 1948 میں آپ پنجاب رجمنٹ کے سیکنڈ بٹالین میں کمپنی کمانڈر کے عہدے پر خدمات انجام دے رہے تھے ۔ جب انہیں کشمیر میں آپریشن پر مامور کیا گیا۔قیام پاکستان کے وقت چونکہ پنجاب رجمنٹ ایک منظم اور فعال رجمنٹ تھی اس لئے اس کو کشمیر جانے کا حکم ملا۔اسی رجمنٹ میں محمد سرور بھی اپنا کورس مکمل کر رہے تھے مگر ابھی ان کی تربیت مکمل نہ ہوئی تھی۔چنانچہ وہ کسی طرح بھی محاذجنگ پر نہیں جا سکتے تھے۔اپنے تجربہ اور قابلیت کی وجہ سے وہ یہ خیال کرتے تھے کہ انہیں ضرور جنگ پر جانا چاہیے۔ابھی محاذ جنگ پر فوج گئی نہ تھی کہ ان کا کورس بھی مکمل ہو گیا۔

انہوں نے فوراً ہی کوشش شروع کر دی کہ ان کو محاذ پر جانے والی یونٹ میں شامل کیا جائے۔کیپٹن محمد سرور نے اس مرتبہ اپنے بٹالین کے کمانڈنگ آفیسر سے بات کرنے کا فیصلہ کیا۔ ملاقات میں کمانڈنگ آفیسر سے انہوں نے د رخواست کی کہ وہ محاذ جنگ پر جانا چاہتے ہیں۔

کمانڈنگ آفیسرکو معلوم تھا کہ یہ محاذآسان نہیں ہے۔لیکن کمانڈنگ آفیسر نے ان سے وعدہ کر لیا اور کچھ دن بعد راجہ محمد سرور کو یونٹ میں شامل کر لیا۔چند روز کے بعد کمانڈنگ آفیسر لفٹینٹ کرنل مسعود احمد نے اپنے ماتحت جوانوں اور افسروں کو جمع کیا اور ان کو اس سلسلے میں مشورے کیلئے کہا۔

کیپٹن راجہ محمد سرور کی اوڑی سیکٹر میں تعیناتی

کمانڈر نے تمام صورت حال ان کے سامنے رکھ دی کہ کوئی ایسا جانباز چاہیے جو مختصر سی جماعت کے ساتھ دشمن کی اس چوکی کو تباہ و برباد کر دے جو فتح کے راستے میں حائل تھی۔ کیپٹن محمد سرور نے جواب دیایہ کام وہ بڑے شوق اور جذبے کے ساتھ کریں گے۔کیپٹن محمد سرور نے تمام باتوں کو غور سے سنا اور کمانڈر کی ہدایات پر عمل کرنے کا وعدہ کر لیا۔27 جولائی 1948 کو انہوں نے کشمیر کے اوڑی سیکٹر میں دشمن کی اہم فوجی پوزیشن پر حملہ کیا۔

اس حملے میں کئی جوان شہید اور زخمی ہوئی لیکن کیپٹن راجہ محمد سرور نے پیش قدمی جاری رکھی۔دشمن کے مورچے کے قریب پہنچ کر انہیں معلوم ہوا کہ دشمن نے اپنے مورچوں کو خاردار تاروں سے محفوظ کر لیا ہے، اس کے باوجود کیپٹن سرور مسلسل فائرنگ کرتے رہے۔اپنے زخموں کی پروا کیے بغیر 6 ساتھیوں کے ہمراہ انہوں نے خاردار تاروں کو عبور کر کے دشمن کے مورچے پرآخری حملہ کیا۔دشمن پر برسٹ کے ساتھ“اللہ اکبر“ کے الفاظ ادا کرتے ہوئے رب کے حضور لبیک کہہ دیا۔دشمن اس چوکی کو چھوڑ کر بھاگ گیا۔دشمن نے اس اچانک حملے کے بعد اپنی توپوں کارخ کیپٹن سرور کی جانب کر دیا، یوں ایک گولی کیپٹن سرور کے سینے میں لگی اور آپ نے شہادت پائی۔

بہادری کی بے مثال تاریخ رقم کرنے پر انہیں نشانِ حیدر سے نوازا گیا

صبح کے سورج نے اس پہاڑی پر پاکستان کا سبز ہلالی پرچم لہراتے ہوئے دیکھا۔بہادری کی بے مثال تاریخ رقم کرنے پر انہیں نشانِ حیدر سے نوازا گیا، یہ اعزاز ان کی بیوہ نے 3 جنوری 1961 کو صدرپاکستان محمد ایوب خان کے ہاتھوں وصول کیا تھا۔کیپٹن محمد سرور شہید نے مادر وطن کے دفاع کے کمال بہادری، جرات کا مظاہرہ کیا۔ان کی شہادت کے بعد جنرل ایوب خان نے اپنے خطاب میں کہا:”میں کیپٹن محمدسرور شہید کی قربانی کا ذکر کرتے ہوئے فخر محسوس کرتا ہوں جنہوں نے سب سے پہلے نشانِ حیدر حاصل کر کے پاکستان کی تاریخ میں ایک نئے باب کا اضافہ کیا ہے۔

کشمیر کی وادیاں آج بھی کیپٹن محمد سرور کی شجاعت اور جوانمردی کی گواہ

ان کی زندگی مثالی تھی میں نیند کا شوقین تھا وہ صبح سویرے اٹھ کر نماز پڑھنے لگتے اور مجھے زبردستی اٹھاتے۔میں انہیں مولوی کہتا اور وہ مجھے روکتے اور شہید کہہ کر پکارنے کو کہتے۔“ صوبیدار منگت خان کا کہنا ہے:”کیپٹن محمدسرور شہید فضول بات چیت نہ کرتے۔ وہ بہت کم گو تھے اور صرف کام کی بات کرتے تھے،ہمیشہ باوضو رہتے اور وقت کی قدر کرتے تھے۔“مادر وطن کی خاطر بیرونی دشمنوں کے خلاف جنگ لڑنے والے کیپٹن سرور شہید آج دہشت گردوں اور اندرونی چیلنجز سے نبرد آزما پاک فوج کے جری سپوتوں کے لئے بہادری کی روشن مثال ہیں۔ کشمیر کی وادیاں آج بھی کیپٹن محمد سرور کی شجاعت اور جوانمردی کی گواہ ہیں کہ کس طرح کیپٹن محمد سرور اپنے خون کے آخری قطرے تک لڑے تھے۔ کیپٹن محمد سرور نے دشمن کی آنکھ میں آنکھ ڈال کر اسے بتایا کہ اس زمین کے لیے وہ خون بہا بھی سکتا ہے اور دشمن کو گرا بھی سکتا ہے۔