سوشل میڈیا کا غلط استعمال کرنے والوں کی شامت

Spread the love

وفاقی وزیرداخلہ رانا ثناءاللہ کی زیر صدارت اسلام آباد میں اہم اجلاس ہوا جس میں وفاقی سیکرٹری داخلہ یوسف نسیم کھوکھر، آئی جی پنجاب راؤسردارعلی خان، ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے محمدطاہررائے،  قائم مقام چئیرمین نادرا بریگیڈیئر (ریٹائرڈ) خالدلطیف اور دیگرحکام شریک ہوئے۔

اجلاس میں سوشل میڈیا پرشہریوں کی ہراسگی،غیراخلاقی ویڈیوزاپلوڈ کرنے،بلیک میلنگ اورانکی کردارکشی سے متعلق معاملات کاجائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں سوشل میڈیا کے ذریعےغیراخلاقی مواد کی تشہیر،شہریوں کی ہراسگی اورکردار کشی کی ذریعے ساکھ خراب کرنے والوں کیخلاف کریک ڈاؤن کا فیصلہ کیا گیا۔وزیر داخلہ راناثناءاللہ نے سائبرکرائم میں ملوث ایسے افراد کے خلاف سخت اور فوری ایکشن کیلئے ڈائیریکٹر جنرل ایف آئی اے کو ہدایات جاری کر دی ہیں۔

اجلاس میں سائبرکرائم بلخصوص ہراسگی اور توہین آمیز مواد اپ لوڈ کرنے اوراس کی تشہیر سے متعلق قوانین کو موثر بنانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔ہراسگی اور کردارکشی کے ذریعے ساکھ خراب کرنےکے معاملے پر پیکا ایکٹ2016  میں ضروری ترامیم لانے کیلئے ورکنگ گروپ تشکیل دے دیا گیا ہے۔ ورکنگ گروپ سوشل میڈیا پر ہراسگی، کردارکشی اور توہین آمیز مواد روکنے کے لئے قانون سازی اورانتظامی اقدامات کے حوالے سے معاملات کاجائزہ لے گا۔ورکنگ گروپ تمام سٹیک ہولڈرز سے مشاورت اور اتفاق رائے سے اپنی مرتب شدہ سفارشات وزارت داخلہ کو پیش کرے گا۔

شہریوں کی شکایات کیلئے ایف آئی اے نے رابطہ نمبرز بھی جاری کردئیے ہیں۔ڈی جی ایف آئی اے کے مطابق  شہری اپنی شکایات ایف ائی اے پورٹل، شکایت نمبر 111345786 یا ایف آئی آئے کے کسی بھی دفتر میں درج کروا سکتے ہیں۔ سائبر سپیس میں ہراسگی، کردار کشی، غیراخلاقی مواد اور بلیک میلنگ سے متعلق شکایات ایف آئی اے کے رابطہ نمبرز پر درج کرواسکتے ہیں۔

وفاقی وزیرداخلہ رانا ثناءاللہ نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سوشل میڈیا پرتوہین آمیز مواد اور شہریوں کی کردارکشی کے ذریعے ساکھ خراب کرنا کسی صورت قابل قبول نہیں۔ سوشل میڈیا پرغیراخلاقی اور توہین آمیز مواد کی موجودگی اور اسکی تشہیر سے معاشرے میں انارکی اور بیگاڑکا اندیشہ ہے ایسے جرائم میں ملوث افراد کیخلاف سخت ایکشن لیا جائے گا، کاروائی بلا تفریق عمل میں لائی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ معاشرے میں اخلاقی اقدار پامال کرنے والوں کیخلاف متعلقہ ادارے زیرو ٹالرینس پالیسی اپنائیں۔شہریوں کی عزت نفس محفوظ بنانے، انکو ہراسگی اور بلیک میلنگ سے بچانے کیلئے ایف آئی اے، پی ٹی اے اور دیگر ادارے فعال کردار ادا کریں۔شہری اپنی شکایات ایف آئی اے کے رابطہ نمبرز پر بھیجیں؛ شکایات پر بلا تاخیر عملدرآمد کریں گے۔

5 thoughts on “سوشل میڈیا کا غلط استعمال کرنے والوں کی شامت

  1. … [Trackback]

    […] Read More Information here on that Topic: daisurdu.com/2022/07/15/سوشل-میڈیا-کا-غلط-استعمال-کرنے-والوں-کی/ […]

  2. … [Trackback]

    […] There you will find 95560 more Information to that Topic: daisurdu.com/2022/07/15/سوشل-میڈیا-کا-غلط-استعمال-کرنے-والوں-کی/ […]

  3. … [Trackback]

    […] Find More Info here on that Topic: daisurdu.com/2022/07/15/سوشل-میڈیا-کا-غلط-استعمال-کرنے-والوں-کی/ […]

  4. … [Trackback]

    […] Here you will find 52422 additional Information on that Topic: daisurdu.com/2022/07/15/سوشل-میڈیا-کا-غلط-استعمال-کرنے-والوں-کی/ […]

  5. … [Trackback]

    […] Info on that Topic: daisurdu.com/2022/07/15/سوشل-میڈیا-کا-غلط-استعمال-کرنے-والوں-کی/ […]

Comments are closed.