نادرا کاوزارت صحت کے ساتھ معاہدہ

Spread the love

نادرا نے قومی صحت کارڈ، صحت سہولت پروگرام کے حوالے سے وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز ریگولیشنز اینڈ کوآرڈینیشن اور پنجاب ہیلتھ انیشیٹو مینجمنٹ کمپنی کے ساتھ ایک معاہدے پر دستخط کیے ہیں۔ نادرا پنجاب سے اہل مستفید ہونے والےشہریوں اور خاندانی ڈیٹا کی تصدیق کے لیے مرکزی مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم فراہم کرے گا۔

اس سلسلے میں نادرا ،  وفاق اور پنجاب کے محکمہ صحت کے حکام کے درمیان  نادرا ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد میں معاہدے پر دستخط ہوئے۔

اس نظام کے ذریعے صوبہ پنجاب کی اہل آبادی  کو   مقررشدہ سرکاری اور  نجی ہسپتالوں میں مفت صحت کی دیکھ بھال اور علاج معالجے کی سہولیات فراہم کی جائیں گی ۔ کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ بطور ہیلتھ کارڈ کا استعمال کیا جائے گا۔

وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز ریگولیشنز اینڈ کوآرڈینیشن کے ساتھ  اس معاہدے کے تحت  نادرا ڈیجیٹل سلوشن  پر مبنی نظام فراہم کرے گا۔ اس نظام میں ڈیٹا کی تصدیق کی خدمات (فیملی کمپوزیشن، شناختی کارڈ کی تصدیق،  سنٹرلائزڈ مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم کی  فراہمی، کال سینٹر سروس سینٹر (آوٴٹ باوٴنڈ) ، ڈیٹا ہوسٹنگ ، اور الائیڈ سروسز اور ہاسپٹل سروسز  ماڈیول  شامل ہیں ۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے چیئرمین نادرا طارق ملک نے کہا کہ نادرا کے پاس حکومت کی اصلاحاتی کوششوں میں معاونت کے لیے بہترین انفراسٹرکچر موجود ہے۔ نادرا وفاقی حکومت کا ایک اہم ٹیکنالوجی بازو ہے جو سروس کی فراہمی سے لے کر سماجی تحفظ کے پروگرام تک مختلف شعبوں میں اپنی ڈیجیٹل خدمات فراہم کرتا ہے۔ انہوں نے یاد دلایا کہ جب پاکستان میں ورلڈ بینک کا غربت سکور کارڈ سروے کرایا گیا تو نادرا نے اسے ڈیجیٹائز کیا، اسے بائیو میٹرکس ڈیٹا بیس سے ملایا اورمیں غربت کے ڈیٹا بیس کو مرتب کرنے میں سہولت فراہم کی۔طارق ملک نے بتایا کہ  اس اجراکے ذریعے پنجاب کے مستقل پتے رکھنے والے شہریوں کو بغیر کسی مالی ذمہ داری کے فوری اور باوقار طریقے سے اپنی طبی صحت کی دیکھ بھال تک رسائی حاصل ہو گی۔ اس پروگرام میں نادرا صرف پنجاب کے لیے یونیورسل کوریج کے تحت 26.3 ملین خاندانوں پر مشتمل 85 ملین افراد کو سہولت فراہم کرنے جا رہا ہے۔

اس سے قبل وفاقی حکومت کے ہیلتھ پروگرام کے تحت نادرا نے ملک بھر میں ایک اعشاریہ6 ملین سے زیادہ طبی علاج کی سہولت فراہم کی۔