شادی کوئی افسانہ نہیں!طلاق کی بڑھتی شرح

Spread the love

’’اب تو پاکستان میں بھی طلاق کی شرح زیادہ ہوگئی ہے

Spread the love

(آج کل پاکستان میں طلاق کی شرح بھی بڑھ گئی۔ میں نے دو خواتین کو اس بارے میں بات کرتے ہوئے سنا ہے اور یہ پہلا موقع نہیں تھا جب یہ موضوع سامنے آیا ہو ۔ بہت سارے لوگوں نے اس معاملے پر بار بار بحث کی ہے کہ اب شادیاں پہلے سے کہیں زیادہ کیوں ناکام ہو رہی ہیں ۔ پرانی نسل صرف جوانوں یا آنے والی نسل پر الزام لگاتی ہے اور کہتی ہے کہ یہ ان کی غلطی ہے۔

اگر آپ اس کے بارے میں عمر رسیدہ افراد سے بات کریں تو آپ کو غالباً کچھ ایسی ہی باتیں سننے کو ملیں گی ۔ ‘آج کل کی نوجوان لڑکیوں میں برداشت کی کمی ہے’ یا ‘لڑکیاں بہت ماڈرن ہو گئی ہیں’۔ جب کہ کچھ صرف کیریئر پر مبنی الزام لگاتے ہیں۔ لڑکیاں اپنی ملازمتوں میں بہت زیادہ مصروف ہونے کی وجہ سے امور خانہ داری صحیح طرح سرانجام دینے کے قابل نہیں ہیں ۔ وغیرہ وغیرہ۔ یہ اب بھی ایک متنازعہ موضوع ہے ۔ خاص طور پر ہمارے معاشرے میں جہاں لفظ طلاق اب بھی ممنوع ہے ۔ اسی وجہ سے آپ کو ہمارے ملک میں طلاق کی شرح میں اچانک اضافے کے پیچھے کوئی سیدھا جواب یا وضاحت شاذ و نادر ہی ملے گی۔

جب بات آتی ہے تو، ہم کسی ایک وجہ کی طرف اشارہ یا اشارہ نہیں کر سکتے کیونکہ ہر کوئی الگ کہانی سناتا ہے ۔ شادی ویسے بھی بہت مشکل ہے اور ہمارا معاشرہ اسے مزید چیلنجنگ بنا دیتا ہے ۔ آپ نے لوگوں کو یہ کہتے سنا ہوگا کہ شادی ایک خطرہ یا جوا ہے، اور ایک طرح سے یہ صحیح بھی ہے، کیونکہ ہمارے ہاں اب بھی شادیاں طے کرتے وقت لڑکے کے روزگار پر سوال کیا جاءے تو اکثر جواب ملتا ہے کہ ابھی تو کچھ نہیں کرتا ذمہ داری پڑے گی تو خود ہی کچھ شروع کر دے گا۔ پھر برادری سے باہر رشتہ دینے پر ملامت عام سی بات ہے۔ کچھ لوگ تو صرف اس خوف سے بیٹی غلط جگہ بیاہ دیتے ہیں کہ ایسا نہ ہو اس کے بعد کوئی رشتہ نہ آئے۔ اس لئے ہر ایک کی مشکلات اور مسائل دوسرے سے یکسر مختلف النوع ہوتے ہیں۔

اب اس کا مقصد لوگوں کو ڈرانا شادی سے دور کرنا نہیں ہے بلکہ یہ سچ ہے کہ حالیہ دنوں میں طلاق عام ہو گئی ہے۔ اسے دیکھنے کے دو نکتے ہیں، ایک یہ کہ اس نے یقینی طور پر خواتین کو ناکام شادیوں سے نکلنے اور اپنی زندگیوں کو سنبھالنے میں مدد کی ہے اور دوسرا نکتہ مایوسی کا ہے۔ یہ کافی مایوس کن ہے کہ معاشرہ مجموعی طور پر خواتین کو تحفظ فراہم کرنے میں ناکام رہا ہے اور انہیں ایسے حالات سے نمٹنے کے لیے بالکل تیار نہیں کیا گیا۔

میرا مطلب ہے کہ انہیں صحیح رہنمائی یا خیال نہیں دیا گیا ہے کہ شادی میں آگے کیا ہوسکتا ہے۔ بہت ساری لڑکیاں اور خواتین اپنی شادیوں سے ناخوش ہونے یا طلاق کا انتخاب کرنے کی ایک بڑی وجہ یہ بتاتی ہیں کہ جب ان کا رشتہ ان کی توقعات پر پورا نہیں اترا تو انہیں اس تلخ حقیقت کا سامنا کرنا پڑا۔

بہت سی لڑکیوں کے ساتھ ایسا ہوا ہے کہ وہ غیر حقیقی توقعات کے ساتھ شادی کر لیتی ہیں، یہ سوچ کر کہ یہ سب قوس و قزح اور گلاب بن جائیں گے لیکن پھر بڑی مایوسی کا شکار ہو کر رہ جاتی ہیں۔ یہ صرف یہاں نہیں ہوتا بلکہ دنیا بھر میں شادی شدہ جوڑوں کے ساتھ ایک مستقل مسئلہ ہے۔ تاہم، ہمارے ملک میں یہ ایک بڑی بات ہے کیونکہ شادی اور اس سے جڑی ہر چیز انتہائی رومانوی ہے۔

آپ نے کہیں نہ کہیں یہ بات محسوس کی ہو گی کہ شادی کا خیال خود شادی سے بہتر ہے بدقسمتی سے ہمارے جیسے غریب ملک میں یہ فلسفہ اکثر شادیوں پر لاگو کیا جا سکتا ہے. شادی کا جشن اس قدر ہنگامہ خیز ہے کہ فوراً ہی اس سے کسی افسانے کی توقع شروع ہو جاتی ہے۔ اس کے علاوہ یہ خود رومانس کا خیال ہے۔ اس سے بہت سی نوجوان لڑکیاں اور لڑکے گزر رہے ہیں یا اپنی زندگی کے کسی موقع پر اس کا تجربہ کیا ہے۔ شادی پر تحقیق کرنے والے ماہرین کا کہنا ہے "ہم نے رومانس کے خیال کو رومانٹک بنا دیا ہے، اور یہ کینسر ہے۔”

جب آپ اس دنیا میں بچوں کی پرورش کرتے ہیں جہاں ہر چیز محبت کی طرف اشارہ کرتی ہے، اور ہر چیز باہر سے بالکل درست ہے، جب ہم اپنی نوعمری اور 20 کی دہائی کے اوائل میں پہلی بار بالغ ہوتے ہیں، تو ہم بہت خوفزدہ ہوتے ہیں۔ ہم بالغ ہونے کے لیے بہت کوشش کر رہے ہیں، کہ ہم میں سے کچھ لوگ غلط لوگوں کو اپنا لیں گے چاہے زبردستی ہی سہی کیونکہ کچھ نہ ہونے سے کچھ ہونا بہتر ہے۔

آپ کون ہیں یہ جاننے کے لیے اپنے لیے وقت کیوں کہ اگر آپ یہ نہیں جانتے کہ آپ کون ہیں تو آپ خود کو کس طرح دنیا کے سامنے پیش کر سکتے ہیں؟ تھوڑی دیر کے لیے خودغرض ہونے میں کوئی حرج نہیں ہے، کیونکہ آپ کو اپنی باقی زندگی بے لوث رہنے کے لیے ملی ہے۔ اگر آپ اپنے آپ سے صرف 20 فیصد محبت کرتے ہیں، تو اس کا مطلب ہے کہ کوئی آپ کے ساتھ آ سکتا ہے اور آپ کو 30 فیصد کی طرح پیار کر سکتا ہے۔ جب کہ اگر آپ اپنے آپ سے 100 فیصد محبت کرتے ہیں تو جو شخص آپ سے محبت کرتا ہے اسے آپ کو محسوس کرانے کے لیے عام سطح سے بالاتر ہو کر آنا پڑے گا۔

جہاں یہ مسئلے کا ایک رخ ہے تو دوسرا ہماری ذہنیت کے اندر ہے۔ آج کل نوجوان لڑکیاں زیادہ سے زیادہ عملی اور حقیقی ہوتی جا رہی ہیں خاص طور پر جب بات شادی کے حوالے سے ان کے نقطہ نظر کی ہو۔ لیکن صورتحال میں بہتری آنے سے پہلے ابھی بہت طویل سفر طے کرنا ہے۔ بہت سے خاندان اپنی بیٹیوں اور بہنوں کو زندگی کی تلخ حقیقتوں سے محفوظ رکھتے ہیں جس کے نتیجے میں بھولی نوجوان لڑکیوں کو اچانک مختلف چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے جو شادی شدہ زندگی ان پر ڈالتی ہے۔ اب جو یہ چیلنجز قبول کر کے آگے بڑھنے کا حوصلہ پیدا کر گئیں ان کی ازدواجی زندگی بہتر گزرتی ہے بصورت دیگر حالات خراب ہو کر ازدواجی زندگی کی ڈور توڑ دیا کرتے ہیں۔

آپ بحث کر سکتے ہیں کہ میں اس بارے میں منفی سوچ رہا ہوں اور بالکل بدتر سوچ رہا ہوں، اور شاید میں کسی حد تک ہوں لیکن کیا یہ بہتر نہیں ہے کہ بدترین حالات کے لیے تیار رہیں اور اس سے لڑنے کے لیے صحیح طور طریقے اپنائیں بجائے اس کے کہ یہ نہ پتہ ہوکہ کیا کرنا ہے۔

ہمارے معاشرے میں شادیاں ایک خاندانی معاملہ ہے اور عام طور پر ان کا اہتمام ممکنہ دولہا اور دلہن کے والدین یا بزرگ کرتے ہیں۔ اکثر اوقات، انہیں نکاح کی تقریب سے پہلے ایک دوسرے سے ملنے کی اجازت بھی نہیں دی جاتی، ایک دوسرے کو جاننے کو تو رہنے ہی دیں۔ کچھ حالات میں، لڑکی اور لڑکا بات چیت کرنے کے قابل ہو جاتے ہیں لیکن شادی سے پہلے ایک دوسرے کو جاننے کے لیے بہت کم وقت دیا جاتا ہے۔ دونوں صورتوں میں، نہ ہی مرد اور نہ ہی عورت کو پوری طرح سے معلوم ہے کہ وہ جس کو ہمسفر مان کر نئی زندگی میں قدم رکھنے والے ہیں اس کی عادات کیا ہیں، پسند نا پسند، خیالات، غرضیکہ شخصیت کے مختلف گوشے سبھی کچھ تقریباً نامعلوم ہوتا ہے۔ ہر ایک کے پاس صرف توقعات کی بھرمار ہوتی ہے۔

اب تصور کریں، ایک نوجوان لڑکی ہے، اس کا رشتوں کے بارے میں علم صرف فلموں، رومانوی ناولوں اور شاید اس کے اردگرد کے ماحول سے آیا ہے جہاں سب کچھ بظاہر بہترین نظر آتا ہے۔ شادی کے بعد اس کی توقعات اپنے جیون ساتھی سے بہت مختلف ہوں گی جو ناکام رشتوں اور ٹوٹی ہوئی شادیوں سے زیادہ واقف ہے۔ آپ سوچ سکتے ہیں کہ آج کے دور میں اتنی زیادہ معلومات سوشل میڈیا اور کنیکٹیویٹی دستیاب ہونے کے ساتھ، مندرجہ بالا منظر نامے کا موجود ہونا ناممکن ہے۔

ٹھیک ہے، یہ واقعی نہیں ہے لیکن اس حقیقت سے انکار ممکن نہیں کہ آج بھی ہمارے معاشرے میں ایسے معاشرتی اصول موجود ہیں اور ان پر عمل کیا جاتا ہے جو خواتین کو رشتوں اور شادی کے بارے میں کھل کر بات کرنے سے روکتے ہیں۔ مائیں اپنی بیٹیوں سے اس بارے میں بات نہیں کرتی ہیں کہ ان کی شادی سے کیا امید رکھی جائے اور رشتے سختی سے نہیں ہیں۔ یہ موڑ ان کی سوچ کو محدود کرتا ہے اور انہیں رومانس کا ایک غیر حقیقی خیال دیتا ہے جیسا کہ فلموں، ٹیلی ویژن اور کتابوں میں بھی دکھایا جاتا ہے۔

حقیقت میں، کوئی خوبصورت اجنبی نہیں ہے جو جوانی کی دہلیز  پر قدم رکھنے والی نازک اندام دوشیزہ کے لئے ٹاور پر چڑھنے والا ہے، پہاڑ کھودنے والا ہے اور کوئی شاہ رخ خان نہیں ہے جو آخر میں سب کچھ ٹھیک کر دے گا۔ حقیقی زندگی کی شادی کو کامیاب بنانے کے لیے بہت زیادہ محنت، صبر اور جدوجہد کی ضرورت ہوتی ہے۔ یہ سب اس بات پر منحصر ہے کہ آپ کتنی جلدی دوسرے کی توقعات پر پورا اترنے اور نئے حالات کے مطابق خود کو ڈھالنے کے قابل ہوتے ہیں۔ یہ ان لوگوں پر بھی لاگو ہوتا ہے جنہوں نے اپنی پسند کے شخص سے شادی کر لی۔ آپ کو یہ سمجھنا ہوگا کہ احساسات ہمیشہ اتنے شدید نہیں رہتے جتنے شروع میں ہوتے ہیں۔ جب روزمرہ کی زندگی شروع ہوتی ہے اور چیزیں بدلنے لگ جاتی ہیں تو آپ کو کچھ مسائل کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ شادی کے بعد زیادہ تر چیزیں بدل جاتی ہیں، بشمول وہ شخص جسے آپ پسند کرتے ہیں۔ اس لیے یہ سوچنا کہ آپ کا ساتھی وہ شخص نہیں ہے جس سے آپ نے شادی کی ہے یا شادی سے پہلے دکھائے گئے سپنے اگر پورے نہیں ہوئے تو جیون ساتھی جھوٹا، مکار اور دھوکے باز ہے غلط ہوتا ہے۔ اگر آپ تبدیلی کو قبول کرنے کے لیے تیار نہیں ہیں تو چیزیں کافی مشکل ہو جائیں گی۔

ایک سب سے اہم پہلو جو شادی کا لڈو کھانے سے پہلے سب کو جاننے کی ضرورت ہے وہ یہ ہے کہ شراکت دار ایک دوسرے کی خوشی کے مکمل طور پر ذمہ دار نہیں ہیں۔ اگر آپ کسی کو آپ کو خوش کرنے کا ذمہ دار ٹھہراتے ہیں ۔ تو یہ آپ کو مایوس اور دکھی کر سکتا ہے۔ بصورت دیگر، زندگی سے بہترین کی توقع رکھنا یا بڑے خواب دیکھنا غلط نہیں ہے لیکن آگے آنے والے کسی بھی چیلنج کے لیے تیار رہنا ہمیشہ بہتر ہے۔

70 thoughts on “شادی کوئی افسانہ نہیں!طلاق کی بڑھتی شرح

Comments are closed.